Skip to content

Deworming Campaign Detail

  • Deworming Campaign

    This single intervention has the tremendous potential to increase the productivity and reduce the incidence of disease.  The Government has established standard working protocols against the Endo and Ecto-Parasites with complete prevalence mapping because according to careful estimate, 42% animals are affected by different types of worms. The worms adversely affect efficiency of the animals and cause a financial loss to their owners. That is why it is important to overcome the worms to improve production of the animals. The worms in animals are more in those areas where animals graze more, than in those areas where animals graze less. There are more worms in those animals which eat dried feed than in those which eat green fodder. Similarly, more worms are found in younger animals than in older ones. One important reason of lesser rate of growth in younger animals in Pakistan is the presence of worms in them.                                                                            

    Kinds of adverse effects of Parasitic Infestation:

    The adverse effects of infestation can be divided into two types.

     1. Hidden                                                 2. Apparent

    Hidden diseases include: Decrease in milk production. Enlargement of the belly. Loss of weight. No pregnancy etc. are the hidden effects of worms. These adverse effects cause financial losses to the owners of the animals. Apparent diseases include: Thinness of skin, Anaemia, Scars and swellings on the body, Cough, Constipation Diarrhea etc. which show the apparent adverse effects of the worms.                                                                                                                                                                      

    Economic Benefits of De -Worming: An increase in milk production of the animal gives the farmer a benefit of at least Rs 4000 in a year. With regular de-worming of calves, their daily growth is enhanced 100 to 400 gms more than the normal; which gives minimum Rs 13,500 benefit to the farmer in one year. Regular de-worming keep the animals healthy and their feed proves useful.                                                                               

    Types of Worms: Worms are usually of two types:  1. Internal parasites (worms)     2. External parasites                                         

    Internal Parasites (Worms): According to an estimate, the mortality rate among the younger animals of 6 months to one year old due to internal worms is 25-30%. Internal worms include round worms, stomach worms, lung worms, liver flukes and intestinal worms.                                                                                                                               

    External Parasites: These parasites are found on external skin. They are mostly blood-sucking parasites Control of Parasites: Keep animals’ sheds clean. There should not be any holes/cracks in the walls or roofs of the sheds, where these external parasites can hide or lay eggs. Spread limestone powder in sheds from time to time. Spray sheds with insecticides after removing the animals from their sheds. In case of ticks, get it treated by a veterinary doctor. Protect chopped fodder from dust and dirt and give the animals clean feed. De- worm animals regularly. Give a variety of de-worming medicines so that the worms cannot build immunity against any medicine. Whitewash the water troughs of the animals with limestone powder for protection against microbes and they cause spread of fatal diseases in the animals. They include lice, ticks, flies and mosquitoes, etc.                                                                                                                      

    De-Worming the Herds of Cows and Buffaloes: The production of milk increases by ½ to 1 litre of milk when lactating animals are de-wormed. The effects of the parasites are different on cows, buffaloes, bulls and on younger animals. Therefore, the methods of their treatment should also be different. De-worming medicines should be administered at least thrice a year to the adult and four times to the younger animals. Keeping in view the above mentioned facts  Livestock Department has started 100 % deworming campaign in all large and small animals including equines and camels first time in history. Ivermactin campaign against ecto and endo parasite has improved the health status of all the animals resulting  in improved production.


    کرم کشی کی مہم

    کرم کشی کے عمل سے پیداور میں اضافہ  کے ساتھ ساتھ جانوروں میں ہونے والی بیماریوں کو بھی کافی حد تک کم کیا جا سکتا ہے۔ گونمنٹ نے جانوروں کے اندرونی اور بیرونی کرموں کو تلف کرنے کے لئے کچھ معیار مرتب کیے ہیں ایک حالیہ اندازہ کے مطابق تقریباً 42 فیصد جانوروں میں ان کرموں کی نشاندہی کی گئی ہے۔  یہ کیڑے جانوروں کی کارکردگی پر اثر اندازہونے کے ساتھ ساتھ ان کے مالکان کے لئےمالی نقصان کا باعث ہیں۔ یہی وجہ ہے کہ جانوروں کی پیداوار کو بہتر بنانے کے لئےان کیڑوں کو تلف کرنا ناگزیر ہے۔ جانوروں میں یہ کیڑے ان علاقوں میں زیادہ پائے جاتے ہیں جہاں چرنے والےجانور کم ہوں , یہ کیڑے سبز چارہ کھانے والے  جانوروں کی بجائے خشک چارہ کھانے والے کم عمر جانوروں میں زیادہ پائے جاتے ہیں پاکستان میں کم عمر جانوروں کی پیداوار میں کمی کی ایک بنیادی وجہ ان میں کیڑے کی موجودگی ہے.                                                                                                                                  ۔                  ۔                                                                                            

    کرموں کی وجہ سےہونے والے امراض کی دو اقسام ہیں۔  

    ۔ پوشیدہ امراض

    ۔ ظاہری امراض

     پوشیدہ -

     پوشیدہ امراض میں دودھ اورگوشت کی پیداوار میں کمی، پیٹ کابڑھنا اورحمل کانا ہونا وغیرہ شامل ہیں۔ ان امراض میں مبتلا جانوروں کے مالکان کو مالی نقصان کا سامنا کرنا پڑتا ہے.                                 ۔

    ۔ ظاہری 

    ظاہری امراض میں جلد کا پتلا ہونا، خون کی کمی، جسم پر داغ دھبے، سوجن، کھانسی اور ڈائریا جیسی بیماریاں شامل ہیں.                                                                                                              ۔

    کرموں کی اقسام: ان کی بنیادی طور پر دو اقسام ہیں۔

    (۔ اندرونی کرم (کیڑے

    ۔ بیرونی کرم

     ۔ اندرونی کرم(کیڑے): ایک اندازے کے مطابق 6 ماہ سے ایک سال کے چھوٹے جانوروں میں شرح اموات 25-30 فیصد ان کیڑوں کی وجہ سے ہے۔ اندرونی کیڑوں میں راؤنڈ ورمز، پیٹ کے کیڑے،  پھیپھڑوں کے کیڑے، لیور فلوکس اور آنتوں کے کیڑے شامل ہیں۔  

    ۔ بیرونی کرم: یہ کیڑے جلد کے بیرونی حصہ پر پائے جاتے ہیں۔ یہ کیڑے زیادہ ترخون چوستے ہیں ان سے بچائو کے لئےجانوروں کے شیڈ صاف ستھرے رکھنے چاہیں۔ انکی دیواروں یا چھتوں میں کوئی سوراخ یا دراڑیں نہیں ہونی چاہیں تاکہ یہ کیڑے ان میں انڈےنا دے سکیں۔ وقتاًفوقتاً شیڈکے اندر چونا پھینکا جائے۔ شیڈ سے جانوروں کو ہٹانے کو بعد کیڑے مار سپرے کرنا چاہیے۔ چچڑیوں کی صورت میں ویٹرنری ڈاکٹر سےرجوع کریں۔ کٹی ہوئی چارہ کو دھول اور گندگی سے بچائیں تاکہ جانوروں کو صاف ستھری خوراک ملے۔ باقاعدگی کے ساتھ جانوروں کی کرم کشی ہونی چاہیے۔ جانوروں کو مختلف اقسام کی ادویات لگائیں تاکہ کیڑے کسی بھی دوائی کے خلاف قوت مدافعت پیدا نہ کرسکیں۔  جانوروں کے پانی پینے والے حوض کو سفید چونا لگا کران کو موزی بیماریاں پھیلانےوالےجراثیم(جوئیں، مکھیاں،چچڑاور مچھروں) سے محفوظ رکھا جا سکتا ہے.                                                                                                                                    ۔ 

                    

    گائیں اور بھیسوں میں ڈیورمنگ

    دودھ دینے والے جانوروں میں ڈیورمنگ کرکے انکی دودھ کی پیداوار 0.5 سے 1 لیٹر تک بڑھ جاتی ہے۔ ان کرموں کا گائے، بھینس، بیل اور چھوٹے جانوروں پر الگ الگ اثرات مرتب ہوتے ہیں۔ کرم کش ادویات چھوٹے جانوروں کو سال میں کم از کم 3 مرتبہ اور بڑے جانوروں کو 4 مرتبہ دینی چاہیے۔ محکمہ لائیوسٹاک نے مندرجہ بالا حقائق کو مد نظر رکھتے ہوئے تاریخ میں پہلی دفعہ چھوٹے بڑے جانور جن میں (گھوڑے، گرھے، خچراور اونٹ)شامل ہیں میں 100٪ کرم کشی کی مہم کا آغاز کیا ہے۔ اندرونی اور بیرونی کرموں کے خلاف آئیورمیکٹن مہم سے نا صرف جانوروں کی صحت میں بہتری آئی ہے بلکہ انکی پیداوارمیں بھی اضافہ ہوا ہے.                                                                                               ۔                                                                                         

                     

Deworming Campaign Gallery