Skip to content

Tick Control / Anti congo Detail

  • Tick Control / Anti Congo Campaign

    Pakistan is one of  the countries having   largest livestock population in the world, but the contribution for the economic aspect of the country is  below the potential  and disease can be considered as major constrain. Ticks are responsible for severe economic losses both through the direct effects of blood sucking and indirectly as vectors of pathogens and toxins. Ticks diseases which are Zoonotic in nature like Congo Fever are  also a threat  for public health . Feeding by large numbers of ticks causes reduction in live weight gain and anaemia among domestic animals, while tick bites also reduce the quality of hides. However, the major losses caused by ticks are due to the ability to transmit protozoan, rickettsial and viral diseases of livestock. In recent decades, parasitism has remained one of the major problems of dairy industry in Pakistan. In this context, the most common tick species prevailing are Hyalomma, Boophilus, Haemaphysalis and Rhipicephalus. The major tick born diseases (TBD) in Pakistan are  theileriosis, babesiosis, and anaplasmosis which effect  buffaloes, cattle, sheep, goats and camels. These diseases are transmitted by ixodes ticks. A number of species of Hyalomma and Rhipicephalus are considered to be the predominant vectors of bovine theileriosis and babesiosis, respectively. In recent years few cases of Congo Fever have also been reported.

    Prevention and Control of  (Tick Borne Diseases) TBDs : Keeping in view  the economic losses and public health importance Livestock and Dairy Development Punjab has launched many Anti tick/Congo virus campaigns  under the direct supervision of worthy secretary Livestock Punjab. During these campaigns millions of  of  cattles, buffaloes, camels ,sheep and goats  have been treated by the use of acaricide which  is the most commonly used method of tick control in  dairy farming . Control of ticks with acaricides may be directed against the free living stages of ticks in the environment or against the parasitic stages on host. Acaricides can be applied by dipping, washes, spraying, pour-on, spot-on or by injections.At the eve of EID- UL-Azha last year Livestock department launched a Mega Anti tick/ Congo Fever Campaign .During this campaign check posts at the entry and exit points of punjab and in Mandies of sacrificial animals were set up to spray the sacrificial animals .Apart from this anti tick campaigns have been scheduled during high-risk months (May to September) of the year. A special campaign for injection of Ivermectin in 100% animals of disease control Compartments is on its way. Livestock department is also working for biological control of ticks Livestock department Punjab is promoting rural poultry by supplying poultry units at subsidized rates in rural areas, free distribution of ducks and a bane on catching of Lali bird which is a tick predator, are the major steps taken for biological control of ticks. Due to above mentioned steps of Livestock Department Punjab under visionary leadership of Mr.Naseem Sadiq the losses due to tick infestation could be controlled.

    ٹک کنڑول / اینٹی کانگو مہم

    پاکستان مویشیوں کی تعداد کے لحاظ سے دنیا کے بڑے ممالک میں سے ایک ہے لیکن یہ ملک کی اقتصادی ترقی میں اپنی صلاحیت کے لحاظ سے کردار ادا نہیں کر پا رہا اور اسکی بڑی وجہ جانوروں میں پائی جانے والی متعدی بیماریاں ہیں۔ چچڑ جانوروں کا خون چوسنے اور بیماریاں پھیلانے والے ویکٹر کے طور پر لائیوسٹاک کےشدید اقتصادی نقصان کا باعث بنتے ہیں۔ چچڑوں سے پھیلنے والی بیماریاں جانوروں سے انسانوں میں بھی لاحق ہو جاتی ہیں جیسے کہ کانگو بخار جو کہ انسانوں کے لئے بھی شدید خطرہ ہے۔ چچڑجانوروں کا خون چوستے ہیں جس سے جانور لاغر اور خون کی کمی میں مبتلا ہو جاتے ہیں۔ انکے کاٹنے سے جانوروں کی کھال بھی خراب ہو جاتی ہے۔ چچڑ جانوروں میں دیگر بیماریوں کے جراثیم(پرٹوزوئل، وائیرل، ریکٹشئل) کو بھی منتقل کرتے ہیں جو کہ لائیوسٹاک کے نقصان کی بڑی وجہ ہے۔ حالیہ دہائیوں میں پیراسائیٹزم پاکستان کی ڈیری صنعت کے اہم مسائل میں سے ایک رہا ہے۔ اس تناظر میں سب سے زیادہ عام چچڑ بوفیلس، ہائلوما اور ریفیسیفلس ہیں۔ ٹک (چچڑوں) سے پیدا ہونے والی بیماریوں میں غدودوں کا بخار، رت مو ترا، اینا پلازموسس شامل ہیں۔ یہ بیماریاں بھینس، گائے، بھیڑ، بکریوں اوراونٹوں میں پائی جاتی ہیں اور یہ ایگزوڈ س نامی ٹک کی وجہ سے منتقل ہوتی ہیں۔ ہائلوما اور ریفیسیفلس کی بہت سی سپیشیز مویشیوں میں بالترتیب غدودوں کا بخاراور رت مو ترا پھیلانے کا موجب بنتی ہیں۔ حالیہ برسوں میں کانگو بخار(جو کہ انسانوں میں چچڑوں کی وجہ سے منتقل ہوتا ہے) کے چند کیس رپورٹ ہوئے ہیں.                                                                                                      ۔                                                                                  

    چچڑوں سے پھیلنے والی بیماریوں کی روک تھام

    لائیوسٹاک کی اقتصادی ترقی اور صحت عامہ کی اہمیت کو مدنظر رکھتے ہوئے سیکرٹری لائیوسٹاک اینڈ ڈیری ڈیویلپمنٹ پنجاب کی زیر نگرانی اینٹی ٹک / اینٹی کانگو مہم کا آغاز کیا گیا ہے جس کے تحت لاکھوں بھینسوں، گائیوں، بھیڑ بکریوں کا چچڑ مار ادویات(اکایری سایڈز) سے علاج کیا گیا ہے۔ جو کہ ڈیری فامنگ میں ٹک کنٹرول کا موثرطریقہ کار ہے۔ ان ادویات کے استعمال سے ماحول اور جانوروں سے ٹکس(چچڑیوں) کو کنٹرول کیا جا سکتا ہے.                                                                             ۔                                                     

    ان ادویات کو جانوروں کی جلد پر محلول بنا کر لگانے / سپرے کرنے(نہلانے) اور ان کا ٹیکہ لگا کر استعمال کیا جاتا ہے۔ گزشتہ سال عید الاضحیٰ کے موقع پر محکمہ لائیوسٹاک نے ایک میگا اینٹی ٹک / اینٹی کانگو فیور مہم کا آغاز کیا تھا۔ اس مہم کے تحت پنجاب کی مویشی منڈیوں اور دیگر داخلی و خارجی راستوں پر بنائی جانے والی چیک پوسٹ پرلائے جانے والے جانوروں پر چچڑ مار ادویات(اکایری سایڈز)  سپرے کیا جاتا تھا۔ اس مہم کے علاوہ شیڈول کے مطابق پورا سال (خصوصاً مئی سے ستمبر) میں ٹکس کنٹرول کی مہمات جاری رہتی ہیں۔ بیماریوں کے کنٹرول کے کمپارٹمنٹ کے 100فیصد جانوروں میں آئیورمیکٹن انجیکشن لگایا جا رہا ہے۔ محکمہ لائیوسٹاک نے دیہی علاقوں میں آسان نرخوں پر مفت مرغیاں / بطخوں کی تقسیم اور لالی پرندے کے شکار پر پابندی لگا کر حیاتیاتی طور پر چچڑوں کو کنٹرول کرنے کی کوشش میں سرگرم ہے.                                                                                                 ۔                                                                                          

    سیکرٹری لائیوسٹاک جناب نسیم صادق صاحب کی زیرنگرانی مندرجہ بالا اقدامات کیے جا رہے ہیں جسکی وجہ سے چچڑوں سے ہونے والے نقصانات سے بچائو ممکن ہے.                                                 ۔ 

     

     

Tick Control / Anti congo Gallery